لاہور:گریمی ایوارڈز2022 ایڈیشن کیلئے گزشتہ روزنامزدگیوں کا اعلان ہوتے ہی شائقین ایک ایسے نام کے بارے میں جاننے کے خواہشمند ہوئے جو سوشل میڈیا پرچھاگیا۔

عروج آفتاب ‘ بیسٹ نیوآرٹسٹ ‘ کے لیے نامزد ہونے والی پہلی پاکستانی بن گئی ہیں،لیکن عروج ہیں کون؟ وہ بیک وقت ایک موسیقار، گلوکار اور پروڈیوسر ہیں جن کے کریڈٹ پر 3 سولو البمز ہیں۔ عروج نے برکلے کالج آف میوزک سے تربیت حاصل کی ہے۔

عروج کی پیدائش سعودی عرب میں ہوئی اورجب ان کی عمر 11 سال تھی تو فیملی دوبارہ لاہورمنتقل ہوگئی۔ اپریل 2021 میں آرٹ فورم پر شائع ہونے والے پروفائل میں عروج نے شیئر کیا کہ انہوں نے بڑے ہوتے ہوئے بیگم اختر، ماریہ کیری اور بلی ہالیڈے کو سنا اور گٹار بجانا سیکھا۔

پاکستان میں ہی عروج نے انٹرنیٹ پر اپنی موسیقی کی تشہیر شروع کی۔ عامر ذکی کے گانے ‘ میرا پیار’ اورلیونارڈ کوہن کے ‘ ہالیلوجا’ کے سرورق نے انہیں پاکستان میں پہلے آزادانہ فنکاروں میں سے ایک کے طور پر پہچان بنانے میں مدد دی۔

عروج کا تازہ ترین اسٹوڈیو البم ‘ولچرپرنس ‘ مئی میں نیو ایمسٹرڈیم ریکارڈز کے ذریعے ریلیز ہوا۔ البم میں 7 گانے ہیں جن میں سے ‘محبت’ اور ‘لاسٹ نائٹ’ کو ناقدین اور سامعین سے یکساں پذیرائی ملی۔ گلوکارہ نے البم میں ‘ باغوں میں ‘ کیلئے ملٹی انسٹرومینٹل ڈیرین ڈونووین تھامس اور ‘ دیا ہے’ کیلئے برازیلی گلوکار بدی اسد کے ساتھ اشتراک کیا۔

جولائی میں عروج کا گانا ‘محبت’ سابق امریکی صدر باراک اوباما کی سمر پلے لسٹ میں بھی شامل تھا۔

عروج آفتاب متعدد میوزک ایوارڈز جیت چکی ہیں۔ گزشتہ سال انہوں بہترین ریپ یا ہپ ہاپ کی کیٹگری میں اپنا پہلا لاطینی گریمی حاصل کیا۔ عروج کو شارٹ فلم ‘بٹو ‘کی موسیقی ترتیب دینے پر اسٹوڈنٹ اکیڈمی ایوارڈ سے بھی نوازا گیا۔

حدیقہ کیانی سمیت کئی مشہور شخصیات نے عروج کو اس شاندار کامیابی پر مبارکباد دیتے ہوئے اورنیک خواہشات کا اظہارکیا ہے۔گریمی ایوارڈز کے 64ویں ایڈیشن کا انعقاد 31 جنوری 2022 کوہوگا۔